Urdu

پچاس سال سے زائد عمر کے لوگ، بچے، بیمار مساجد نہ جائیں، جمعہ کا خطب مختصر کریں، علما کرام کا مشترکہ اعلامیہ

کراچی: جید علمائے کرام نے گورنر سندھ عمران اسماعیل سے ملاقات کے بعد ایک مشترکہ اعلامیہ جاری کیا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ ملک میں کرونا وائرس کا مسئلا اہمیت اختیارکرگیا ہے اور اس وائرس نے پوری دنیا میں تباہی مچادی ہے لہذا اگر حفاظتی طورپر محتاط نہ رہا جائے تو زیادہ لوگ متاثرہوتے ہیں۔ مفتی تقی عثمانی سے منسوب بیان میں کہا گیا ہے کہ کوئی بھی وبااللہ کی مرضی سے آتی اوران کی مرضی سے جاتی ہے، قرآن میں بتایا گیا ہے کہ مصیبتیں ہمارے اعمال کی وجہ سے آتی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ احتیاطی تدابیرنبی کی سنت ہے۔ انہوں نے کہا کہ توبہ استغفارکے بغیر چھٹکارہ مشکل ہے لہذا عریانی ناانصافی نفعہ خوری سودخوری زنا ودیگرگناہوں سے اللہ سے معافی مانگی جائے، اگرایسا نہ کیا گیا تو بچنا مشکل ہے۔ مفتی منیب سے منسوب بیان میں کہا گیا ہے کہ وبائیں درحقیقت اللہ کی طرف سے ہمارےلئے آتی ہیں تاکہ ہم توبہ کی طرف رجوع کریں لہذا میڈیا بے حیائی بند کرے۔ انہوں نے کہا کہ باجماعت نماز جاری رہے گی تاہم وضو گھر پر کریں اور سنتیں گھرپر پڑھ کر آئیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ پچاس سال سے زائد اوربیمارمسجد نہ آئیں کیونکہ وبا کےد ور میں ان کو جماعت کا ثواب ہوگا۔ انہوں نے مزید کہا کہ جماعت گھرکی خواتین کے ساتھ بھی ہوسکتی ہے۔ مفتی منیب نے مزید کہا کہ صفائی کاخاص احتمام کیا جائے اور مسجدوں کے دروازوں پر سینیٹائیزرلگائے جائیں ۔ انہوں نے کہا کہ جن لوگوں کو ڈاکٹرز نے منع کیاہےوہ گھروں پرنماز پڑہیں، نابالغ بچے نمازکے لئے مسجد نہ آئیں، انفرادی اوراجتماعی غلطیوں کی اللہ سے معافی مانگیں۔انہوں نے صراحت سے کہا کہ حکومت طبی لحاظ سےکسی کو منع کرے تو وہ۔مسجد نہ آئے

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button
Close
Close