Urdu

سندھ ہائی کورٹ میں راشن کی تقسیم کا معاملہ، ڈپٹی کمشنر ساوتھ نے جواب جمع کرادیا

کراچی: سندھ ہائی کورٹ میں لیاری میں راشن کی غیر منصفانہ تقسیم کے خلاف درخواست کی سماعت ہوئی جس میں ڈپٹی کمشنر ساوتھ نے تحریری جواب جمع کرادیا۔ ان کی جمع کرائی گئی رپورٹ کے مطابق کراچی کے ضلع ساوتھ میں 6 ہزار 375 راشن بیگ تقسیم کئے جاچکے، لیاری کی 15 یونین کونسل مستحقین کی نشاندہی کے بعد راشن کے بیگ تقسیم کیے گئے۔ درخواست گذار کا کہنا تھا کہ ڈپٹی کمشنر غلط بیانی کرریے ہیں، پورے علاقے میں حکومت نے کسی کو راشن نہیں دیا۔ جسٹس محمد علی مظہرنے درخواست گزار سے استفسار کیا کہ علاقے میں کوئی ایسا شہری جس سے آپ سے رابطہ کیا ہو کہ راشن نہیں ملا؟ جواد ڈیرو ایڈیشنل جنرل سندھدرخواست گزار 10 ٹریلین روپے نقد رقم لیاری کے لیے مانگ رہے ہیں، اتنا تو صوبے بجٹ نہیں ہے، انکو نقد رقم کہاں سے دیں۔ انہوں نے عدالت کو بتایا کہ سندھ حکومت نے کیش کی مد میں کسی کی مدد نہیں کی پورے صوبے میں راشن تقسیم کیا جارہا ہے، سندھ حکومت نے لاک ڈاؤن کے دوران 96934 مستحقین کو وقت سے پہلے زکوٰۃ کی رقم ادا کردی ہے، جبکہ راشن کی تقسیم کے لیے صوبائی حکومت نے پہلے فیز میں 58 کروڑ روپے دوسرے فیز میں 50 کروڑ روپے جاری کیے۔ عدالت نے درخواست گزار کو 14 مئی کو جواب الجواب جمع کرانے کی ہدایت کردی۔ جسٹس محمد علی مظہر نے ریمارکس دئے کہ آئندہ سماعت پر کیس سن پر فیصلہ کردیں گے۔

دریں اثنا راشن کی تقسیم سے متعلق عدالت میں جمع ہونے والے ڈپٹی کمشنر ساوتھ کے جواب کی کاپی رینجل ٹیلی گراف نے حاصل کرلی۔ جواب کے مطابق سندھ حکومت کی جانب سے جاری نوٹفیکشن کے مطابق راشن کی تقسیم کے حوالے سے کمیٹی تشکیل دی اور صوبائی حکومت نے یوٹیلیٹی اسٹور سے راشن کی کوالٹی چیک کرکے خریدنے کا کہا تھا۔ جواب میں کہا گیا کہ چونکہ یوٹیلٹی اسٹورز مقررہ مدت میں راشن بیگ فراہم نہیں کر سکتا تھا لہذا مختلف سپر مارٹ سے سیمپل حاصل کرنے کے بعد بہترین کوالٹی کا آٹا،چاول،چاول اور برینڈیڈ چائے کی پتی خریدی گئی۔ جواب میں دئے گئے اعدادو شمار کے مطابق ضلع جنوبی میں کل 15710 راشن بیگز تقسیم کئے گئے جن میں سے لیاری میں 6375,گارڈن 2950,آرام باغ میں 1260 راشن بیگز تقسیم کئے گئے، صدر میں 1825 اور سول لائن میں 3300 ضرورت مند اور غریب افراد کو راشن تقسیم کیا، ضلعی انتظامیہ نے ایسٹر کے تہوار کی وجہ سے اقلیتی برادری پر خاص توجہ دی جبکہ خواجہ سراوں کو بھی راشن بیگز فراہمی میں خاص توجہ دی گئی۔ اس کے علاوہ ریلیف کمیٹی میں مقامی نمائندوں،این جی اوز کے افراد کو بھی شامل کیا گیا اس تمام عمل کی موثر نگرانی یقینی بنائی گئی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button
Close
Close