Urdu

کراچی، گزشتہ چار مہینوں میں ٹریفک حادثات میں 91افراد جان سے گئے

کراچی : کراچی میں جون، جولائی اگست،ستمبر2020 میں سڑکوں پر ٹریفک حادثات میں 91 افراد جان سے گئے۔ ریجنل ٹیلی گراف کو دستیاب اعدادوشمار کے مطابق اسی عرصے میں جان لیوا حادثات میں معجزانہ طورپرمحفوظ رہنے والے 21 افراد عارضی یا مستقل معذوری کا شکار ہوگئے۔ اعدادوشمار سے معلوم ہوتا ہے کہ کراچی میں ستمبرمیں 31 افراد کوڈمپر،واٹرٹینکرز،ٹرالرز نے کچل کرہلاک کیا۔ دیکھنے میں آیا کہ شہر کی سڑکوں پر دوڑنے والی ہیوی ٹریفک نے سب سے زیادہ جانیں لیں، فیملی کے ساتھ موٹرسائیکل پرسفرشہریوں کی زندگی کے لیے رسک بن گیا جبکہ ٹریفک قوانین،روڈ سیفٹی کوبالائے طاق رکھنے والی ہیوی گاڑیوں کے ڈرائیوربے رحم ہوگئے۔ شہر قائد میں موٹرسائیکل پرسوارفیملیزاورانسانیت کے احترام سے عاری ڈرائیورز نے کمسن بچوں اورخواتین کوبھی نہ بخشا، دوبھائیوں سمیت کمسن بہن کوواٹرٹینکرکی طرف سے اخترکالونی پر کچلنے کا معاملہ سرفہرست رہا جبکہ دادا دادی،پوتا کوڈمپرنے شہید ملت روڈ پرکچل دیا۔ اس کے علاوہ ماں بیٹے کو ٹرالرنے شاہ لطیف کے علاقے میں کچل دیا تو دوبھائیوں کو شیرشاہ میں ٹرالرنے کچل کربے موت ماردیا۔ ادھر سرجانی میں میاں بیوی کمسن بچی کو ڈمپرز نے کچل دیا تو بیت المکرم مسجد کے پاس نوجوان کوڈمپر نے کچل کرمار دیا۔ موٹر وہیکل آرڈیننس 1965، موٹر وہیکل آرڈیننس 1969 اور قومی وہیکل آرڈیننس 2000 پرعملدرآمد سوالیہ نشان ہے جبکہ انسانی جانوں کے تحفظ کے لیے روڈ سیفٹی پر ایکشن پلان کی ذمہ داری بھی سوالیہ نشان باقی ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button
Close
Close