Urdu

کراچی سرکلر ریلوےمنصوبے کی بحالی میں اب تک کی پیشرفت سےمتعلق تفصیلات جاری

لاہور: کراچی سرکلر ریلوےمنصوبے کی بحالی میں اب تک کی پیشرفت سےمتعلق تفصیلات جاری کردی گئی ہیں جس کے مطابق کے سی آر کے مجموعی طور پر20 اسٹیشنزہیں، 15 لوپ لائن اور5 مین لائن پر ہیں، کے سی آر منصوبے کو 3 مراحل میں بحال کیا جائے گا۔ پاکستان ریلوے کی رپورٹ کے مطابق دوسرے مرحلے میں اورنگی سے گیلانی اسٹیشن تک 7 کلومیٹرتک ٹریک بحال کیاجائے گا، تیسرے مرحلے میں گیلانی اسٹیشن سے ڈرگ کالونی تک 9 کلومیٹر ٹریک بحال ہوگا، پہلےکراچی سٹی سے لے کراورنگی اسٹیشن تک 14 کلومیٹر ٹریک بحال ہوگا، پورے ٹریک پر 24 لیول کراسنگ یعنی پھاٹک قائم ہیں، کے سی آر 30 کلومیٹر لوپ لائن اور14 کلومیٹر مین لائن پر بنا ہے، ٹریک 44 کلو میٹر پر مشتمل ہے، مرحلے یعنی کراچی سٹی سے اورنگی تک ٹریک کی بحالی کا کام شروع کردیاہے جبکہ کراچی سٹی سے منگھو پیر تک 12 کلومیٹر ٹریک مکمل بحال ہوچکا، رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ پہلے مرحلے میں 9 اسٹیشنز اور پلیٹ فارم ہیں، 15 لیول کراسنگ کی مرمت کیلئے 15.25 کروڑ روپے خرچ ہوں گے، الیکٹریکل سگنل اور ٹیلی کمیونی کیشن کیلئے 5 کروڑ روپے لاگت کا تخمینہ ہے، رپورٹ کے مطابق دونوں منصوبوں کے ٹینڈررواں مالی سال جولائی میں جاری کیے جاچکے ہیں۔ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ 10 انجن اور40 کوچز کے سی آرمنصوبے کیلئے کیرج فیکٹری کے سپرد ہیں جبکہ انجنوں کی مرمت اور تزئین و آرائش کا کام بہتر طریقے سے جاری ہے، رپورٹ کے مطابق پرانے کے سی آر نظام کو بحال کرنے کیلئے 1850 ملین کی لاگت آئے گی، یومیہ 32 ٹرینیں 16 ہزار مسافروں کو اپنی منزل پر پہنچائیں گی، پہلی سے آخری منزل تک کا فاصلہ صرف آدھے گھنٹے میں طے ہوگا، پاکستان ریلویز کے سے آر منصوبے کی بحالی کے بعد دوسرے مرحلے میں اس کی اپ گریڈیشن کرے گی، رپورٹ میں بتایا گیا کہ کے سی آر کی اپ گریڈیشن کیلئے 8705 ملین روپے درکار ہوں گے اور اپ گریڈیشن کے بعد ٹرینوں کی تعداد 32 سے بڑھ کر 48 ہوجائے گی جبکہ اپ گریڈیشن کے بعد مسافروں کی گنجائش 16 ہزار سے بڑھ کر 24 ہزار ہوجائے گی

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button
Close
Close