Urdu

حویلیاں میں پی آئی اے کا اے ٹی آر طیارہ کریش کی تحقیقات چار سال بعد مکمل، رپورٹ سندھ ہائیکورٹ میں پیش

کراچی: حویلیاں میں پی آئی اے کا اے ٹی آر طیارہ حادثہ کیس کی تحقیقات چار سال بعد مکمل کرلی گئی ہیں اور سول ایوی ایشن کی جانب سے 207 صفحات پر رپورٹ سندھ ہائیکورٹ میں پیش کردی گئی۔ رپورٹ کے مطابق حادثے کا شکار اے ٹی آر طیارہ خراب تھا، حادثے کا ذمہ دار پائلٹ نہیں بلکہ ٹیکنیکل فالٹ وجہ جہاز گرکر تباہ ہوا۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ یو ایس اے، فرانس اور کینیڈا نے کی طرف سے بھی جواب سول ایوی ایشن کو موصول ہوگئی جس میں اے ٹی آر طیارہ حادثے کا پی آئی اے ذمہ دار قرار گیا۔ عدالت نے ڈائریکٹر سیفٹی منیجمنٹ پی آئی اے تو آئندہ سماعت پر طلب کرلیا۔ جسٹس محمد علی مظہر نے استفسار کیا کہ حادثے کا ذمہ دار کوم تھا؟ واقعہ کس کی غفلت سے پیش آیا؟ اس پر ائیر کموڈور عثمان غنی کا کہنا تھا کہ رپورٹ میں شامل کچھ چیزیں پبلک نہیں کرسکتے،

جسٹس محمد علی مظہر نے ریمارکس دئے کہ مستقبل میں ایسے حادثات رونما نہ ہوں کیا اقدامات کیے جارہے ہیں؟ اس پر ائیر کموڈور عثمان غنی نے کہا کہ بین الاقوامی معیار کے مطابق تحقیقات کی گئی ہیں، مزید حادثات سے بچنے کے لیے سفارشات اور تجاویز بھی دی گئی ہیں، جس محمد علی مظہر نے استفسار کیا کہ اے ٹی آر طیاروں کے لیے مزید کیا فیصلے کیے گئے ہیں؟ بنیادی طور جہاز کی خرابی کی وجہ سے حادثہ رونما ہوا؟ پی آئی اے انتظامیہ مزید حادثات سے بچنے کے لیے عدالت میں پیش ہوکر عدالت کو بتائیں، بعد ازاں عدالت نے کیس کی مزید سماعت یکم دسمبر تک ملتوی کردی۔ یاد رہے کہ حویلیاں میں 2016 میں اے ٹی آر طیارہ حادثے کا شکار ہوا تھا اور حادثے میں جنید جمشید سمیت 47 افراد جاں بحق ہوگئے تھے

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button
Close
Close